جنو بی پنجا ب میں پا نی کی کمی    


کو شائع کی گئی۔ November 8, 2018    ·(TOTAL VIEWS 60)      No Comments

تحر یر ۔۔۔ ڈا کٹر عبد ا لمجید چو ہد ری 
انسا نی ز ند گی میں بہت سی چیز و ں کو ا ہمیت حا صل ہے ا سی طر ح ا ہم غذ ا ئی جزوپا نی کو ہر جا ند ا ر کے لئے ا ہمیت حا صل ہے جس طر ح ز ند گی گزا ر نے کے لئے آ کسیجن کی ضر و رت ہے ا سی طر ح ہر جا ندار کے لئے پا نی کی ضر و رت ہے یہ و سیع و عر یض کا ئنا ت اور ا س کا ئنا ت کے یہ حسین نظا ر ے ا س کا ئنا ت میں مسکر ا تی کلیا ں ز مین کے حسن کو چا ر چا ند لگا تے اور تا ز گی بکھر تے مسکر ا تے پھو ل لہلہا تے کھیت ا س کا ئنا ت میں جو یہ ز ند گی پو ر ی آ ب و تا ب کے سا تھ ر وا ں دوا ں ہے یہ ہما ر ی ز مین ہے ا ب تک جو سیا ر ے اور ستا ر ے د ریا فت ہو ئے ہیں ا ن میں ز ند گی کے ا ثر نظر نہیں آ ئے یہ د نیا ہی ہے جس میں پا نی کی مو جو د گی کی و جہ ا بلتے چشمے بل کھا تی ند یا ں سمند کی مست لہر یں خا مو ش جھیلں پہا ڑو ں سے گر تی آبشا ر یں ز میں کے حسن کو جو بڑھ ر ہی ہیں یہ سب پا نی کی مو جو د گی کی و جہ سے ہے پا نی کے بغیر کسی ذ ی ر و ح کا ز ند ہ ر ہنا ممکن نہیں ا گر ہم پا کستا ن کی با ت کر تے ہیں تو ا س و قت پا کستا ن کو پا نی کی کمی کا سا منا ہے قیا م پا کستا ن کے و قت سے شر و ع ہو نے وا لا مسئلہ اس و قت گمبھیرصو ر ت ا ختیا ر ا ختیا ر کر گیا ہے اور یہ آ بی تنا زع پا کستا ن اور بھا ر ت کو جنگی مید ا ن کی طر ف د ھکیل ر ہا ہے پا کستا ن میں پا نی کی کمی کے مسا ئل اور آ لو دگی کی شکل میں کشید گی کے مسا ئل ہر جگہ مو جو د ہیں پا کستا ن کی آ با د ی 20.77کر و ڑ ہے ا سی ر فتا ر سے ا گر آ با د ی بڑھتی ہے تو پا کستا ن کی سو یں سا لگر ہ تک یعنی 7 204 ء پا کستا ن کی آ با د ی 39.5 کر و ڑ سے تجا و ز کر جا ئے گی تو ا س ر فتا ر سے بڑ ھتی ہو ئی آ با د ی کی پا نی کی ما نگ میں ا ضا فہ ہو گا آ ئی ، ا یم ، ا یف کی ر پو ر ٹ 2015 ئکے مطا بق پا نی کی ما نگ میں جو ا ضا فہ ہو ر ہا ہے و ہ اضا فہ 2025ء تک 27.4 کر و ڑ ا یکڑ فٹ تک پہنچنے کا ا مکا ن ہے ا گر ہم ا س ر پو ر ٹ پہ غو ر کر یں تو پا نی کی ما نگ اور فر ا ہمی میں فر ق 8.3 کر و ڑ فٹ کا ہے اسی طر ح ز یر ز میں پا نی کی سطح بھی گر ر ہی ہے ما ہر ین کے مطا بق 1960 ء میں پنجا ب بھر مین تقر یبا بیس ہز ا ر ٹیو ب و یلزتھے آبی ما ہر ین کے مطا بق یہ تعد ا د بڑ ھ تقر یباد س لا کھ سے بھی ز یا د ہ ہے ا س مسئلے کا تعلق ز یر ز مین پا نی کی کمی کے سا تھ صنعتی اور گھر یلو فضلے کی و جہ سے آ لو د ہ ہو نے سے بھی ہے اس و قت پا کستا ن میں د ر یا ؤ ں میں پا نی کی سطح مز ید کم ہو گئی ہے جس کے با عث فصلو ں کو پا نی کی فر ا ہمی کے متا ثر ہو نے کا شد ید خطر ہ پید ا ہو گیا ہے محکمہ آ بپا شی کے ذرا ئع کے حو ا لے سے کہا گیا ہے کہ دریا ؤں مین پا نی کی کمی کے با عثتر بیلا اور منگلا ڈیم میں پا نی کی سطح ا نتہا ئی حد تک گر گئی ہے ذ را ئع نے بتا یا کہ با ر شیں کم ہو نے کی و جہ سے جو ن تک پا نی کی قلت ر ہے گی جس کے با عث فصلو ں کو پا نی کی فر ا ہمی متا ثر ہو گی ا سی طر ح ا نڈ یا اور پا کستا ن کے در میا ن آ بی تنا ز عہ بھی ا تنا ہی پر ا نا ہے جتنی ان دو نو ں مما لک کی عمر یں پا کستا ن کا ا نحصا ر تین مغر بی د ریا ؤ ں پر ہے اور ا ن مغر بی دریا ؤ ں میں دریا ئے سند ھ سب سے ا ہم در یا ہے جنو بی ا یشیا میں پا نی کے ا مو ر کے ما ہر جا ن بر یسکو ئی کا کہنا ہے کہ ا گر بھا ر ت بڑ ے ڈ یم بنا تا ہے تو سند ھ طا س مین پا نی کا بہا ؤ ا تنا کم ہو جا ئے گا کہ پا کستا ن میں فصلو ں کی کا شت کے لئے پا نی د ست یا ب نہیں ہو گا سند ھ طا س معا ہد ے کی ر و سے پا کستا ن کو ا پنے تین مشر قی دریا بھا ر ت کے حو ا لے کر نا پڑ ے ا ن د ر یا ؤ ں کا پو ر ی طر ح ا نڈ یا نے ا ستعما ل کر لیا ا س کے با عث پا کستا نی سر حد سے نیچے دریا ر ا و ی اور ستلج میں پا نی نہیں پہنچتا ا ن د ر یا ؤ ں کی یہ گز ر گا ہیں مکمل طو ر پر خشک ہو چکی ہیں سند ھ طا س معا ہد سے پہلے ا ن دریا ؤ ں کے پا نی سے لا کھو ں من گند م کپا س ا ور ٹنو ں کے حسا ب سے مچھلی حا صل ہو تی تھی ا ن در یا ؤ ں کی گز ر گا ہیں خشک ہو نے کی و جہ سے ا ر د گر د کے علاقو ں کا ز یر ز مین پا نی کی سطح ا نتہا ئی نیچے چلی گئی ہے بہا و ل پو ر ا س کے ا ر د گر د کے با سیو ں کا بھی پا نی حا صل کر نے کا و ا حد ذر یعہ ز یر ز مین پا نی ہے یہ ذ خیر ہ آ ب جو د ر یا ئے ستلج کی و جہ سے بھر ا ر ہتا تھا ا س در یا کو بھا ر ت کے حو ا لے کر نا کا خمیا ز ہ بہا و ل پو ر کے با سیو ں کو بھگتنا پڑ ر ہا ہے کیو نکہ پا نی کی سطح مسلسل گر تی جا ر ہی ہے پا کستا ن کو نسل آ ف ر یسر چ ا ن و ا ٹرر یسو ا سزنے پنجا ب میں پا نی کی خطر نا ک حد تک کمی ہو نے کے حو ا لے سے رپو ر ٹ جا ر ی کر دی ہے جس میں کہا گیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ پا نچ دریا ؤ ں کی ز مین بنجر ہو نے کے قر یب ہے پنجا ب میں پا نی کی کمی خطر نا ک حد تک بڑ ھ ر ہی ہے ر پو ر ٹ کے مطا بق لا ہو ر ،لو د ھر ا ں ،و ہا ڑ ی ، خا نیو ا ل ، اور ملتا ن میں ز یر ز مین نو ے فیصد پا نی کتم ہو گیا ہے جبکہ با قی د س فیصد پا نی میں سنکھیاکی مقد ا ر خطر نا ک حد تک ز یا د ہ ہو گئی ہے پی سی آ ر ڈبیلو آ ر کی دو سا لہ تحقیق میں ا س با ت کا ا نکشا ف کیا گیا ہے کہ میٹھا پا نی تیزی سے کھا ر ے پا نی میں تبد یل ہو ر ہا ہے جس سے پیٹ کی بیما ر یا ں جنم لے ر ہی ہیں خو شا ب ، جہلم ، لیہ ،جھنگ ، سر گو د ھا اور فیصل آ با د کا ز یر ز میں پانی پینے کے قا بل نہیں ر ہا ر پو ر ٹ کے مطا بق پا نی بیچنے وا لی بڑ ی کمپنا ں بھی ز یر ز مین پا نی کو میٹھا کر کے بیچ ر ہی ہیں ا نڈیا نے آبی جا ر حیت کر تے ہو ئے دریا ئے چنا ب پر 2000 ء میں بگلیا ر ڈ یم کی تعمیر شر و ع کی جو کہ سندھ طا س معا ہد ے کی خلا ف و ر ز ی ہے ا س آ بی جا ر حیت کی و جہ سے پا کستا ن کو پینتیس فیصدپا نی کی کمی کا سا منا ہے اور پا کستا ن کی گنے اور کپا س کی فصلیں متا ثر ہو نے کا خد شہ ہے اور ا س بھا ر تی آ بی جا ر حیت کی و جہ سے د ر یا ئے چنا ب کا پا نی ر و ک بھا ر ت پا کستا ن کو قحط اور غذ ا ئی بحر ا ن پید ا کر نے کی کو شش کر ر ہا ہے اگر بھا ر ت سند ھ طا س معا ہد ے کی خلا ف و ر زی کر تا ہے تو مر ا لہ راوی لنک کینا ل ا پر چنا ب کینا ل ا پر گو گیر ہ بر ا نچ کینا ل لو ئر گو گیر ہ بر ا نچ کینا ل ر کھ بر ا نچ کینا ل جھنگ بر ا نچ کینا ل بر ا لہ مین کینا ل میا نو ا لی مین کینا ل سمیت سینکڑ وں ڈ سٹر ی بیو ٹر کا پا نی ر و کنے یا کم ہو نے سے پا کستا نی کسا ن شد ید متا ثر ہو گے پنجا ب کے ا ضلاع سیا لکو ٹ گو جر ا نو ا لہ لا ہو ر شیخو پو ر حا فظ آ با د ٹو بہ ٹیک سنگھ ننکا نہ صا حب فیصل آ با د جھنگ سا ہیو ا ل او کا ڑ ا ا ن علا قو ں کا ہز ا رو ں ا یکڑ ر قبہ بنجر ہو نے کا خطر ہ ہے آ ئی ا یم ا یف کی ر پو ر ٹ کے مطا بق پا کستا ن ا ن مما لک میں سر فہر ست ہے جو پا نی کی کمی کا شکا ر ہیں 

Readers Comments (0)




Free WordPress Themes

WordPress Blog