رواں سال پاکستان کی معاشی شرح نمو منفی 1.5 فیصد رہے گی: آئی ایم ایف   


کو شائع کی گئی۔ April 15, 2020    ·(TOTAL VIEWS 61)      No Comments

اسلام آباد: (یواین پی) عالمی مالیاتی ادارے (آئی ایم ایف) نے ورلڈ اکنامک آؤٹ لک رپورٹ جاری کر دی ہے جس میں پاکستانی معیشت کیلئے خطرے کی گھنٹی بجا دی ہے۔ورلڈ اکنامک آؤٹ لک رپورٹ جاری کرتے ہوئے آئی ایم ایف کا کہنا ہے کہ رواں سال پاکستان کی معاشی شرح نمو منفی 1.5 فیصد رہے گی، جس کے باعث پاکستان میں بے روزگاری اگلے دو سال مسلسل بڑھنے کا خدشہ ہے۔عالمی مالیاتی ادارے کا کہنا ہے کہ پاکستان میں رواں سال بیروزگاری 4.5 فیصد، اگلے سال 5.1 فیصد تک پہنچ جائے گی۔ پاکستان میں گزشتہ مالی سال بے روزگاری کی شرح 4.1 فیصد تھی۔آئی ایم ایف کا مزید کہنا تھا کہ موجودہ مالی سال مہنگائی 11.1 فیصد کی سطح پر رہنے کا امکان ہے، اگلے سال مہنگائی کم ہو کر 8 فیصد کے سنگل ہندسے پر آجائے گی۔عالمی ادارے کے مطابق اگلے سال معاشی شرح نمو میں بھی بہتری کی امید ہے۔ گروتھ 2 فیصد رہنے کا تخمینہ امسال کرنٹ اکاونٹ خسارہ 1.7 فیصد، اگلے سال 2. 4 فیصد رہے گا۔اس سے قبل آئی ایم ایف نے مختلف ممالک کا پالیسی ٹریکر بنایا ہے جس میں کورونا وائرس سے کے نمٹنے کیلئے اقدمات کا ذکر کیا گیا ہے، فہریست میں پاکستان بھی شامل ہے۔عالمی مالیاتی ادارے کے پالیسی ٹریکر کے مطابق اس وقت تک 193 ممالک نے ہنگامی اقدامات اٹھائے، پاکستان سے متعلق کہا گیا ہے کہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں نے مختلف اقدامات اٹھائے، بین الاقوامی پروازیں اور سرحدیں بند کی گئی، مختلف شہروں میں لاک ڈاون اور اسکول بند کیے گئے ہیں۔ صوبائی حکومتوں نے 23 مارچ سے فوج سے مدد طلب کی۔معاشی اقدامات سے بتایا گیا ہے کہ 1200 ارب روپے کا پیکیج کا اعلان کیا گیا، این ڈی ایم اے کو آلات کی خریداری کے لئے 25 ارب روپے دیے گئے، حکومت نے 100 ارب روپے کا امدادی فنڈ بھی قائم کیا، اسٹیٹ بینک نے دو مرتبہ شرح سود میں کمی کااعلان کیا، نجی شعبے کے لئے اصلاحات کا بھی اعلان کیا گیا۔

Readers Comments (0)




Premium WordPress Themes

Free WordPress Themes