محبت سیدنا مو لا نا لحسین   


کو شائع کی گئی۔ August 27, 2020    ·(TOTAL VIEWS 57)      No Comments


تحر یر ۔۔۔۔ ڈا کٹر عبدا لمجید چو ہدری
دنیا نے سینکڑو ں دلدوزمنا ظر اور روح فر سا واقعا ت د یکھے ہو ں گے ر نج و غم کی دا ستا نیں سنی ہو ں گی غمگسا رو ں کے حا لا ت اور ما تم کر نے وا لو ں کے آ نسو ﺅ ں کے دریا بہتے د یکھے ہو ں گے لیکن تا ر یخ کے کسی دور میں دینا کے کسی ا لمنا ک حا د ثةپر نسل ا نسا نی نے ا س قدر آ نسو نہ بہا ئے ہو ں گے جس قدر دا ستا ن کر بلا میںشہا د ت حسین پر حضر ت ا ما م عا لی مقا م جگر گو شہ بتو ل 3شعبا ن 4ھ مطا بق 8جنوری626ء پیر کے کے دن پید ا ہو ئے آ پ کی وا لدہ جگر گو شہ ر سو ل صلی اللہ علیہ و سلم کی چہیتی بیٹی حضر ت فا طمہ تھیں حضر ت سید نا مو لانا لحسین کے والد محتر م حضر ت علی شیر خد ا اور آپ سر و ر کو نین فخردو عا لم ر سا لت پنا ہ حضر ت سید نا محمد صلی ا للہ علیہ و سلم کے لا ڈلے نو ا سے تھے حضو ر ا کر م صلی ا للہ علیہ و سلم کے قلب مبا ر ک میں حضر ت سید نا مو لا نا لحسین کی خصو صی محبت و د یعت کی گئی تھی آ پ صلی ا للہ علیہ و سلم حضر ت سید نا مو لا نا لحسین کی ا د نی سی تکلیف میں بے قر ا ر ہو جا تے تھے 61ھ میں بد قسمتی سے دنیا جبر و ظلم کے گھٹا ٹو پ ا ند ھیر و ں میں گھر گئی تھی ا ٓزادی اور حر یت کی جگہ شخصیت پر ستی نے اور نظا م شو ر وی کی جگہ ڈکٹیٹر شپ نے لے تھی جمہو ر یت کا جنا زہ نکلنے لگاتھا و ہ مسند جس پر حضر ا ت صحا بہ کر ا م خلفا ء متمکن تھے اس پر یز ید جیسا ظالم و جا بر حکمر ا ن بیٹھ گیا ا س نے ا سلا م کے نو رانی چہر ے پر نفس پر ستی اور خو د غر ضی کے جا لے تا ن د یے یہ وہ حا لا ت تھے جن کو د یکھ کر حضر ت سید نا مو لا نا لحسین بے چین ہو گئے حمیت وغیر ت نے گو ا رہ نہ کیا کہ ہما ر ے جیتے جی نا نا جا ن کا د ین مٹ جا ئے جمہو ر یت اور آ زادی رائے کا پر چم لہر ا نے کے لئے خا ند ا ن سمیت میدان میں کو د پڑ ے یزیداور اس کی ھر کا ت کا پیر و چا ہتا تھا کہ ا سلا م کا شورا ئی نظا م اما م عا لی مقا م کے نا م پر اسلا م سے خا ر ج ہو جا ئے ا س کے ا فسر ا ن نے دو لت و حکو مت کا لا لچدیا جا ن و ما ل کا خو ف دلا یا سید نا مو لا نا لحسین جن کو بچپن میں ہی جنت کی بشا ر ت مل چکی تھی اگر آپ چا ہتے یزید کی ا طا عت کا ا علا ن کر کے تما م مصیبت سے نجا ت پا لیتے لیکن سید نا مو لا نا لحسین حق کی راہ سے نہ ہٹے اور اللہ کی مر ضی پر را ضی بر ضا ر ہے اور ا پنے مسلک پر چٹا نو ں کی طر ح قا ئم ر ہے سیدنا مو لا نا لحسین نے جنگ وجدال سے بچنے کی ہر ممکن کو شش فر ما ئی مگریزیدی فو ج نے یز ید کی بیعت کے سو ا اور کو ئی شر ط منظو ر نہ کی اور 10محر م 61ھ مطا بق10 ستمبر681ءکوبا لآخر حق و با طل کی وہ جنگ چھڑ گئی جس پر ا نسا نیت ر ہتی د نیا تک حسر ت و ا فسو س کے آ نسو بہا تی ر ہے گی ا دھر حضر ت سید نا مو لا نا لحسین کے بہتر چھو ٹےاور بڑ ے شید ا ئی جو تین دن سے بھو کے پیا سے تھے اور دشمنو ں کی تعد ا د ہزاروں پر مشتمل تھی لیکن ہر ا یک نے جر ت و ہمت کا مظا ہر ہ کیا اور جا ن عز یز حق کی حما یت میں قر با ن کر د ی حضر ت سید نا مو لا نا ا لحسین کی شہا د ت تا ر یخ عا لم کا وہ درد نا ک وا قعہ ہے جو ا یک ا بد ی زند گی اور آنے والی نسلو ں کے لئے سبق آمو ز ہے کہ ا یسے نا ز ک وقت میں جب کہ آ پ کے یا رو مد گا ر خو ن میں لت پت تھے سید نا مو لا نا لحسین صبر و تحمل کا پہا ڑ بن کر ا للہ کی جا نب متو جہ ر ہے بے شک ۔۔۔۔ ا ما م سید نا مو لا نالحسین کے جسم کو تیر و ں نے چھلنی کر دیا تلواروں نے سر تن سے جد ا کر دیا لیکن سید نا مو لا نا لحسین کا نا م آج بھی د لو ں کو گر ما نے اور تا یک را ہو ں کو رو شن کر نے کے لئے ایک مثا ل ہے حضر ت سید نا مو لا نا لحسین نے حق کے لئے راستی کے لئے شر یعت کی حفا ظت کے لئے ا نسا نیت کا بھر م ر کھنے اور ا س کا سر اونچا کر نے کے لئے ا صو ل اور آزادی کے لئے ملک اور قو م کے لئے تر قی کے لئے ہر چیز اللہ کی راہ میں قر با ن کر دی اور سر تھا تو اس کو حق کے لئے کٹا دیا ۔۔۔ ہا ں ہر گزکسی رو ح کے لئے جا ئز نہیں کہ وہ محبت سید نا مو لا نا لحسین کا دعویدار ہو ان کے ا عما ل سیر ت حسینی کے مطا بق نہ ہو ں اگر محبت میں سچے ہو تو اعما ل کو سیر ت مو لا نا لحسین کے مطا بق کر نا ہو گااللہ ا س سے محبت کر تا ہے جو حسین سے محبت کر ے (الحدیث )۔

Readers Comments (0)




Free WordPress Theme

Free WordPress Theme