نقیب اللہ قتل کیس، راؤ انوارکو سب جیل میں رکھنے پر اعتراضات عدالت میں جمع   


کو شائع کی گئی۔ May 18, 2018    ·(TOTAL VIEWS 65)      No Comments

کراچی(یواین پی)نقیب اللہ قتل کیس میں مدعی مقدمہ نے راؤ انوارکو سب جیل میں رکھنے پر تحریری اعتراضات عدالت میں جمع کرادیے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق نقیب اللہ کے والد کے وکیل فیصل صدیقی نے انسداد دہشت گردی کی عدالت میں سابق ایس ایس پی ملیر راؤ انوارکو جیل کے بجائے سب جیل قرار دی گئی ان کی رہائش گاہ میں رکھنے پر اپنے اعتراضات جمع کرائے ہیں۔تحریری اعتراض میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ مفرور راؤ انوارکو سپریم کورٹ میں پیش ہونے کے بعد گرفتار کیا گیا، راؤ انوارکو سپریم کورٹ کی ہدایت پر ریمانڈ کے لئے منتظم جج کے روبرو پیش کیا گیا، ایک ماہ کے ریمانڈ کے بعد ملزم کو جیل بھیجا گیا، ملزم نے کسی قسم کے سیکیورٹی خدشات کی شکایت نہیں کی لیکن اس کے باوجود 21 اپریل کو آئی جی جیل خانہ جات نے زبانی احکامات پر ملتان لائینز ملیر کینٹ کو سب جیل قرار دے دیا، سب جیل قرار دینے کا کوئی نوٹی فکیشن بھی پیش نہیں کیا گیا، راؤ انوارکو جیل کی بجائے سب جیل میں رکھنا غیر قانونی قرار دیا جائے۔واضح رہے کہ 13 جنوری 2018 کو کراچی کے ضلع ملیر میں اس وقت کے ایس ایس پی ملیر راؤ انوارکی جانب سے ایک مبینہ پولیس مقابلے میں 4 دہشتگردوں کی ہلاکت کا دعوی کیا گیا تھا تاہم بعد میں معلوم ہوا کہ ہلاک کئے گئے لوگ دہشتگرد نہیں بلکہ مختلف علاقوں سے اٹھائے گئے بے گناہ شہری تھے جنہیں ماورائے عدالت قتل کردیا گیا۔ جعلی پولیس مقابلے میں ہلاک ہونیوالے ایک نوجوان کی شناخت نقیب اللہ کے نام سے ہوئی۔

Readers Comments (0)




Free WordPress Theme

Free WordPress Themes