انتخابی قوانین میں بڑے پیمانے پر ترامیم کا فیصلہ، اثاثوں کی غلط بیانی پر 3سال قید ہوگی

Published on September 23, 2014 by    ·(TOTAL VIEWS 666)      No Comments

2عام انتخابات کی تاریخ کا اعلان صدر از خود نہیں کر سکیں گے ، پولنگ سے 90روز قبل ووٹ کی منتقلی پر پابندی ہوگی
ریٹرننگ افسران الیکشن کمیشن کے ماتحت ہونگے، خواتین کو ووٹ ڈالنے کی اجازت نہ دینے پر انتخابات کالعدم تصور ہونگے
قومی اسمبلی کے امیدوار کیلئے انتخابی اخراجات کی حد 60 لاکھ صوبائی امیدوار کیلئے انتخابی اخراجات کی حد 40 لاکھ روپے ہوگی
اسلام آباد(یو این پی) الیکشن کمیشن نے انتخابی قوانین میں بڑے پیمانے پر ترامیم کا فیصلہ کر لیا ، اثاثوں کی تفصیلات پر غلط بیانی پر تین سال قید کی سزا سنائی جائے گی ، عام انتخابات کی تاریخ کا اعلان صدر از خود نہیں کر سکیں گے ، پولنگ سے نوے روز قبل ووٹ کی منتقلی پر پابندی ہوگی،الیکشن کمیشن کی جانب سے انتخابی اصلاحات کمیٹی کو ارسال کی گئی سفارشات میں صدر مملکت کیلئے عام انتخابات کی تاریخ کا اعلان الیکشن کمیشن کی مشاورت سے مشروط کر دیا گیا ہے، عام انتخابات کی تاریخ کا اعلان صدر از خود نہیں کر سکیں گے۔ ترامیمی مسودے میں کہا گیا ہے کہ ریٹرننگ افسران الیکشن کمیشن کے ماتحت ہوں گے، قومی اسمبلی کے امیدوار کیلئے انتخابی اخراجات کی حد 60 لاکھ روپے جبکہ صوبائی اسمبلی کے امیدوار کیلئے انتخابی اخراجات کی حد 40 لاکھ روپے ہوگی، مسودے کے مطابق اثاثوں کی تفصیلات پر غلط بیانی پر تین سال قید کی سزا سنائی جائے گی۔ اثاثہ جات جمع نہ کرانے والے ارکان کی رکنیت 60 روز کیلئے معطل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ مسودے میں کہا گیا ہے کہ الیکشن کمیشن کو اثاثوں کی تفصیلات کی جانچ پڑتال کا اختیار ہوگا، انتخابات سے ایک ماہ قبل پولنگ سکیم منجمد اور پولنگ سے 90 روز قبل ووٹ کی منتقلی پر پابندی ہوگی، امیدواروں کی اسکروٹنی کی مدت 7 سے بڑھا کر 15 روز کرنے کی سفارش کی گئی ہے، مسودے کے مطابق خواتین کو ووٹ ڈالنے کی اجازت نہ دینے پر انتخابات کالعدم قرار دے دیئے جائیں گے،رئٹرننگ افسران الیکشن کمیشن کے ماتحت ہوں گے۔ قومی اسمبلی کے امیدوار کیلئے انتخابی اخراجات کی حد ساٹھ لاکھ روپے ہوں گی جبکہ صوبائی اسمبلی کے امیدوار کیلئے انتخابی اخراجات کی حد چالیس لاکھ روپے ہوں گی۔

Readers Comments (0)




Premium WordPress Themes

Premium WordPress Themes