Article by Dr.B.A.Khurramشب قدر فضیلت کی رات   


کو شائع کی گئی۔ June 30, 2016    ·(TOTAL VIEWS 748)      No Comments

Dr.Khurramشب قدر فضیلت کی رات
تحریر۔۔۔ ڈاکٹر بی اے خرم
ماہ صیام بڑی برکتوں،رحمتوں اورفضیلتوں والامہینہ ہے۔پہلے عشرے کو رحمت،دوسرے کو مغفرت اور تیسرے کو بخشش والا عشرہ کہا گیاہے تیسرے عشرے میں اعتکاف اور شب قدر بھی آتی ہے جولیلۃ القدرکہلاتی ہے۔یہ بڑی ہی بابرکت رات ہے لیلۃ القدرماہ رمضان کے آخری عشرے کی طاق راتوں میں ایک رات ہیشب معراج اور شب برات کی طرح شب قدر بھی بڑی فضیلت اور اہمیت والی رات ہے شب قدر کو ماہ رمضان کے تیسرے عشرے میں پوشیدہ کر دیا گیا ہے عام طور پر شب قدر کو ستائیسویں رات سمجھا جاتا ہے۔
رب کائنات نے پوری سورۃ القدرنازل فرمائی۔’’بے شک ہم نے اس (قرآن) کو شب قدر میں اتارا ہے ۔ اور آپ کو کیا معلوم کہ شب قدر کیا ہے ۔ شب قدر ہزار مہینوں سے بہتر ہے۔ اس میں فرشتے اور روح نازل ہوتے ہیں اپنے رب کے حکم سے ہر کام پر۔وہ صبح روشن ہونے تک سلامتی کی رات ہے ‘‘۔
اللہ تعالی نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کوشب قدرعطافرمائی اورارشادفرمایا’’اے محمدﷺشب قدرہزار مہینوں سے بہترہے جومیں نے تجھے اورتیری امت کوہرسال عطافرمائی ہے یہ رات ماہ رمضان میں تمہارے لئے اورقیامت تک آنے والے تمہارے امتیوں کے لئے ہے جوہزارمہینوں سے بہترہے ‘‘۔
امام شافعی کہتے ہیں شب قدر رمضان المبارک کی اکیسویں رات ہے۔ امام مالک کہتے ہیں ۔ ماہ رمضان کا آخری عشرہ برابر ہے کسی ایک رات کو دوسری پر فضیلت نہیں ہے حضرت عائشہ کا قول ہے لیلتہ القدر انتیسویں رات ہے بعض کا قول بھی یہی ہے حضرت ابو ذر کا کہنا ہے لیلتہ القدر پچیسویں رات ہے ابو بردہ اسلمی شب قدرکو تیسویں رات کہتے ہیں ابی بن کعب اور ابن عباس لیلتہ القدر کو ستائسویں رات کہتے ہیں۔اور دلیل بیان کرتے ہیں کہ امام احمد بن جنبل اپنی انساد میں ابن عمرؒ سے روایت ہے
ابن عباس عمر بن خطابؓ سے روایت ہے کہ ’’میں نے شب قدر جاننے کے لئے طاق عدوں پہ غور کیا تو مجھے پتا چلا کہ سات کا عدد اس لئے زیادہ مناسب ہے سات کے عدد پہ غور کیا تو معلوم ہوا کہ
سات آسمان ہیں ۔
سات زمینیں ہیں ۔
سات راتیں ہیں ۔
سات دریا ہیں ۔
صفا اور مروہ کے درمیان سات مرتبہ دوڑتے ہیں ۔
خانہ کعبہ کا سات مرتبہ طواف کرتے ہیں ۔
پتھر بھی سات ہی پھینکے جاتے ہیں ۔
آدمی کی پیدائش بھی سات عضووں سے ہوتی ہے ۔
آدمی کا رزق کی سات دانے ہیں ۔
اللہ رب العزت نے انسان کے چہرے میں سات سوراخ بنائے ۔
سورۃ فاتحہ کی آیات مبارکہ بھی سات ہیں ۔
ختم کی سورتیں بھی سات ہیں ۔
مقدس قرآن کی قرآت بھی سات ہیں ۔
دوزخ کے سات دروازے ہیں ۔
اصحاب کہف کی تعداد بھی سات ہے ۔
عاد کی قوم سات راتوں میں ہلاک ہوئی ۔
اگر کتا مٹی کے برتن میں منہ ڈالے تو آقا جی محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے سات مرتبہ دھونے کا کہا ۔
آقا جی محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے جب حضرت عائشہؓ سے نکاح کیا تو آپؓ کی عمر سات برس تھی ۔
اللہ تعالی نے سات چیزوں کی قسم کھائی
آفتاب ، چاشت کا وقت ،چاند ، دن ، رات ، آسمان ،جس نے آسمان اور زمین کو بنایا ۔
دوزخ کے سات نام ہیں ۔
حضرت موسی علیہ السلام کے قد کی لمبائی سات ہاتھ تھی ( اس وقت کے ہاتھوں کے حساب سے )۔
حضرت موسی علیہ السلام کا عصا سات ہاتھ لمبا تھا ۔
حضرت یوسف علیہ السلام سات سال قید میں رہے ۔
اللہ تعالی فرماتا ہے کہ حج کے بعد سات روزے رکھو۔
حضرت معاویہ بن ابوسفیانؓ سے روایت ہے کہ حضورنبی کریمﷺنے فرمایاشب قدرستائیسویں رات کی ہوتی ہے ۔(ابوداؤد)۔
لوگوں کا یہ شیوہ تھا کہ رمضان المبارک کے آخری عشرے میں جو خواب دیکھتے تھے وہ آقا جی محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت اقدس میں حاضر ہو کر بیان کرتے تھے ایک مرتبہ آقا جی محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ’’ تمہیں جو پے در پے خواب نظر آئے ہیں یہ ستائیسویں رات میں واقع ہوئے ہیں پس اس سے معلوم ہوتا ہے کہ شب قدر ستائیسویں رات ہے ‘‘۔
پس ثابت ہوتا ہے کہ اللہ تعالی نے بہت سی چیزوں کو سات سات بنایا جب لیلتہ القدر ماہ رمضان کے آخری عشرہ کی ایک رات ہے تو اس اوپر کے استدلال ہوتا ہے کہ یہ بھی ستائیسویں رات ہی ہو گی
حضرت سیدناابوہریرہؓ سے مروی ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشادفرمایاکہ’’ جوایمان کی وجہ سے اورثواب کے لئے شب قدرمیں قیام کرے اسکے گذشتہ گناہ بخش دیے جائیں گے‘‘۔
حضرت انس بن مالکؓ سے روایت ہے کہ ایک مرتبہ ماہ رمضان المبارک کی آمدپر حضورﷺنے ارشادفرمایا۔”یہ ماہ جوتم پرآیاہے اس میں ایک رات ایسی ہے جوہزارمہینوں سے افضل ہے جوشخص اس رات سے محروم رہ گیاگویاوہ ساری خیرسے محروم رہااوراس رات کی بھلائی سے وہی شخص محروم رہ سکتاہے جوواقعتاََمحروم ہو”(ابن ماجہ)۔
ام المومنین حضرت عائشہ صدیقہؓ فرماتی ہیں کہ میں نے (ایک دفعہ)آقاﷺسے عرض کیایارسول اللہ ﷺاگرمیں لیلۃ القدرکو پالوں تواس میں کیادعاکروں؟آپ ﷺ نے ارشادفرمایا یوں کہواَللَّھُمَّ اِنَّکَ عَفُوّ’‘تُحِبُّ الْعَفْوَفَاعْفُ عَنِّیْ اے اللہ توبہت معاف فرمانے والاہے اوردرگزرکرنے کوپسندکرتاہے پس تومجھ کومعاف فرما ۔
رب کائنات ہم مسلمانوں کو شب قدر میں زیادہ سے زیادہ سعادتیں سمیٹنے کے توفیق دے آمین۔

Readers Comments (0)




WordPress Themes

WordPress Themes