روس یوکرین جاری تنازع کے پیچھے امریکہ محرک قوت ہے، چینی میڈ یا

Published on February 25, 2024 by    ·(TOTAL VIEWS 38)      No Comments

بیجنگ (یو این پی) روس یوکرین جاری تنازع کو پورے دو سال ہو چکے ہیں۔ اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے انسانی حقوق کے مطابق، گزشتہ دو سالوں میں، دونوں اطراف میں پانچ لاکھ سے زیادہ افراد ہلاک یا زخمی ہوئے ہیں، اور 10 ملین سے زیادہ یوکرینی بے گھر ہوئے ہیں. اس تنازعے کے پھیلنے کے بعد ، تیزی سے عالمی سطح پر توانائی کی قیمتوں اور کھانے پینے کی اشیاء کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ، اور کچھ افریقی ممالک کو “خوراک کی قلت” کا بھی سامنا کرنا پڑا۔ جوں جوں وقت گزرتا گیا، تنازعے کے منفی اثرات پھیلتے گئے۔آج، اس جنگ پر غور کرتے ہوئے، بیرونی دنیا زیادہ واضح طور پر دیکھ سکتی ہے کہ سرد جنگ کی ذہنیت اس تنازعے کے باعث تباہی و بربادی لائی ہے، اور امریکہ اس تصادم کے پیچھے محرک قوت ہے. امریکہ کا مقصد روس کو کمزور کرنا، یورپ کو غیر مستحکم کرنا اور اس بحران کو دنیا میں منتقل کرنا ہے، تاکہ اس سے فائدہ اٹھایا جا سکے اور اپنی بالادستی برقرار رکھی جا سکے۔دو سال سے جاری اس تنازعے نے یہ بھی ثابت کیا ہے کہ یکطرفہ پابندیاں کام نہیں کرتیں، بلکہ تضادات اور محاذ آرائیوں کو تیز کرتی ہیں۔اعداد و شمار کے مطابق امریکہ اور یورپی یونین نے گزشتہ دو سالوں میں روس کے خلاف اقتصادی پابندیوں کے 13 دور متعارف کرائے ہیں اور نومبر 2023 تک پابندیوں کی مجموعی تعداد 17500 تک پہنچ چکی ہے۔ لیکن روس کی جنگی کارروائیوں کو تبدیل کرنے کے بجائے، پابندیوں نے اس تنازعے کو ایک طویل جنگ میں تبدیل کر دیا ہے، جس کا خمیازہ یورپ کو بھی بھگتنا پڑ رہا ہے۔تاریخ نے ثابت کیا ہے کہ کسی بھی تنازعے کا حتمی نقطہ مذاکرات کی میز پر واپسی ہے۔ یوکرین کے بحران کو طول دینا، پیچیدہ بنانا اور وسعت دینا عالمی برادری کے مشترکہ مفاد میں نہیں ہے۔ تمام فریقین کو یہ تسلیم کرنا ہوگا کہ مذاکرات اور مذاکرات ہی بحران سے نکلنے کا واحد قابل عمل راستہ ہیں۔چین نے ہمیشہ تمام فریقین پر زور دیا ہے کہ وہ معقول تحمل کا مظاہرہ کریں، بحران میں اضافے سے گریز کریں، اور مشترکہ طور پر جنگ کے خطرے کو پھیلنے سے روکیں اور انسانی بحران کو ابھرنے سے روکیں۔ چین کئی مواقع پر کہہ چکا ہے کہ اگر امن کے لیے صرف امید کی ایک کرن بھی نظر آئے تو چین اپنی کوششیں ترک نہیں کرے گا اور جنگ کو روکنے اور جلد از جلد امن کی بحالی میں تعمیری کردار ادا کرتا رہے گا۔

Readers Comments (0)




WordPress Themes

Free WordPress Themes